News4

بنگال کا فنڈ اندرون 7دن جاری کرنے مرکز کو ممتا کا الٹی میٹم

ایک لاکھ 16 ہزار کروڑ کی اجرائی باقی‘ بڑے پیمانے پر احتجاج کا انتباہ
کولکاتہ : چیف منسٹرمغربی بنگال ممتا بنرجی نے ایک بار پھر مرکز کی مودی حکومت پر شدید تنقدی کی ہے اور جلد از جلد اس فنڈ کی فراہمی کا مطالبہ کیا ہے جو ریاست کو ملنا ہے جو طویل عرصہ سے جاری نہیں کیا جا رہا۔ ممتا بنرجی نے بقایہ فنڈ کو جاری کرنے کیلئے مرکزی حکومت کو باضابطہ سات دنوں کا الٹی میٹم دے دیا ہے۔میڈیا رپورٹس کے مطابق ممتا بنرجی نے مرکزی حکومت کو متنبہ کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر سات دن کے اندر مغربی بنگال کو بقایہ فنڈ جاری نہیں کیا گیا تو ترنمول کانگریس بڑی سطح پر احتجاجی مظاہرہ کرے گی۔ ممتا بنرجیٰ پہلے بھی کئی بار مرکزی حکومت سے فنڈ جاری کرنے کا مطالبہ کر چکی ہیں۔ گزشتہ سال 20 دسمبر کو انھوں نے وزیر اعظم نریندر مودی سے ملاقات بھی کی تھی جس میں بقایہ فنڈ معاملے پر تبادلہ خیال ہوا تھا۔ میٹنگ کے بعد ممتا بنرجی نے کہا تھا کہ وزیر اعظم نے تجویز پیش کی کہ ریاست اور مرکز کے افسران ایک ساتھ بیٹھ کر اس مسئلہ کا حل نکالیں گے۔ حالانکہ اب تک مغربی بنگال کا بقایہ فنڈ مرکزی حکومت کے ذریعہ جاری نہیں کیا گیا ہے۔قابل ذکر ہے کہ مغربی بنگال حکومت نے جو اعداد و شمار پیش کیے ہیں اس کے مطابق مرکزی حکومت پر ریاست کا ’پردھان منتری آواس یوجنا‘ کے تحت 9330 کروڑ روپے، منریگا کے تحت 6900 کروڑ روپے، قومی ہیلتھ مشن کے تحت 930 کروڑ روپے، پی ایم گرام سڑک یوجنا کے تحت 770 کروڑ روپے، سوچھ بھارت مشن کے تحت 350 کروڑ روپے بقایہ ہے۔ علاوہ ازیں مڈ ڈے میل کے تحت بھی 175 کروڑ روپے کا فنڈ جاری ہونا باقی ہے۔20 دسمبر 2023 میں جب وزیر اعلیٰ ممتا بنرجی نے وزیر اعظم مودی سے ملاقات کی تھی امید کی جا رہی تھی کہ مسئلہ حل ہو جائے گا۔ ممتا بنرجی نے اس موقع پر کہا تھا کہ مغربی بنگال کیلئے مرکزی حکومت کو ایک لاکھ 16 ہزار کروڑ روپے جاری کرنا ہے۔ وزیر اعظم مودی کے ذریعہ ریاستی و مرکزی افسران کی میٹنگ کا بھروسہ دینے سے امید جاگی تھی کہ بقایہ فنڈ جاری ہو جائیں گے، لیکن ہنوز ریاست کو اس کا انتظار ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *