پیپلز پارٹی کے اکثریتی اراکین نے حکومت میں جانے کی مخالفت کر دی

اسلام آباد: پاکستان پیپلز پارٹی کے سینٹرل ایگزیکٹیو کمیٹی (سی ای سی ) اجلاس میں اکثریتی اراکین نے حکومت میں جانے کی مخالفت کر دی۔

چیئرمین پیپلز پارٹی بلاول بھٹو اور آصف زرداری کی زیرِ صدارت سی ای سی کے دوسرے اجلاس میں اراکین کی مختلف رائے سامنے آئی۔ اکثریتی اراکین نے حکومت میں جانے کی مخالفت کی جبکہ بعض نے کی حمایت کی۔ سابق صدر کے قریب سمجھے جانے والے ساتھیوں نے حکومت میں جانے کی تجویز دی۔

آصف زرداری نے کہا کہ آپ تمام اراکین اپنی اپنی رائے دے دیں، ہم سننا چاہتے ہیں کہ آپ لوگ کیا رائے رکھتے ہیں، آپ کی تجاویز کے بعد ہم حتمی فیصلہ کریں گے۔

ذرائع نے اے آر وائی نیوز کو بتایا کہ سی ای سی کے بعض اراکین نے پی ٹی آئی مینڈیٹ کو تسلیم کرنے کی تجویز دی۔ تجویز میں کہا گیا کہ ہمیں (ن) لیگ کے ساتھ ہاتھ ملانے کے بجائے تحریک انصاف کے ساتھ ملنا چاہیے، پی ٹی آئی سے بھی ہاتھ نہیں ملاتے تو اپوزیشن میں بیٹھنا چاہیے۔

ذرائع کے مطابق تجویز دی گئی کہ آنے والے وقت میں چیلنجز بہت ہیں عوام پر بوجھ پڑا تو سیاسی نقصان ہوگا، آئندہ بننے والی حکومت نے آئی ایم ایف کے ساتھ معاہدہ کرنا ہے، اس معاہدے میں تاثر دیا جا رہا ہے کہ بہت مشکل فیصلے کرنے ہوں گے، ڈھائی ڈھائی سال حکومت لینا درست عمل نہیں ہوگا، پیپلز پارٹی سندھ اور بلوچستان میں اپنی حکومت بنائیں جبکہ وفاق میں اپوزیشن میں بیٹھیں۔

بعض اراکین کی رائے تھی کہ پیپلز پارٹی کو بھی مینڈیٹ ملا ہے اگر حکومت بنا سکتے ہیں تو ہرج نہیں، حکومت میں جانے سے قبل دیکھیں کیا ہم اس صورتحال میں پر فارم کر سکتے ہیں؟، بلاول بھٹو وزیر اعظم بنے اور مشکل فیصلوں سے گزر گئے تو کارکردگی دکھا سکتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *