ڈپٹی میئر حیدرآباد شوہر کے ساتھ بی آر ایس سے مستعفی

لوک سبھا انتخابات سے قبل گلابی پارٹی کو جھٹکا، بہت جلد کانگریس میں شامل ہوں گے
حیدرآباد ۔ 24 فبروری (سیاست نیوز) گریٹر حیدرآباد میں بی آر ایس کو ایک اور سیاسی جھٹکا لگا ہے۔ ڈپٹی میئر سری لتا ریڈی اور ان کے شوہر شوبھن ریڈی جو بی آر ایس لیبر شعبہ کے ریاستی صدر تھے ، دونوں نے بی آر ایس سے مستعفی ہونے کا فیصلہ کیا ہے اور اپنا مکتوب استعفیٰ بی آر ایس کے سربراہ کے سی آر کو روانہ کردیا ہے۔ باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہیکہ بی آر ایس کے مزید کئی کارپوریٹرس پارٹی سے مستعفی ہونے کی تیاری کررہے ہیں۔ لوک سبھا انتخابات سے قبل پھر ایک مرتبہ بی آر ایس پارٹی میں اتھل پتھل دیکھی جارہی ہے۔ پارٹی کے کئی قائدین کانگریس اور بی جے پی سے رابطہ بنائے ہوئے ہیں۔ چند دن قبل ڈپٹی میئر سری لتا ریڈی اپنے شوہر کے ساتھ چیف منسٹر اے ریونت ریڈی سے ان کی قیامگاہ پر ملاقات کی تھی جس کے بعد سے ہی افواہیں گشت کررہی تھی کہ وہ بی آر ایس سے مستعفی ہوکر کانگریس میں شامل ہوجائیں گی۔ دونوں میاں بیوی نے اپنے مکتوب استعفی میں کے سی آر کو بتایا کہ بی آر ایس کے حقیقی کارکنوں کو پارٹی میں اہمیت نہیں دی جارہی ہے۔ مسائل پر تبادلہ خیال کرنے کی کوشش کی گئی مگر پارٹی قیادت نے کبھی ملاقات کیلئے وقت نہیں دیا اور نہ ہی ہماری کوئی بات سنی جس سے دلبرداشتہ ہوکر وہ پارٹی سے مستعفی ہورہے ہیں۔ باوثوق ذرائع سے پتہ چلا ہیکہ ڈپٹی میئر سری لتا ریڈی حلقہ لوک سبھا سکندرآباد سے کانگریس ٹکٹ کی دعویدار ہیں۔ کانگریس پارٹی ہائی کمان سے گرین سگنل ملنے کے بعد ہی انہوں نے بی آر ایس پارٹی سے استعفیٰ دیا ہے۔ گریٹر حیدرآباد میں بی آر ایس کے کئی کارپوریٹرس پارٹی قیادت سے ناراض ہے اور کانگریس سے رابطہ میں ہے۔ بہت جلد 20 سے زیادہ بی آر ایس کے کارپوریٹرس کانگریس میں شامل ہوجائیں گے۔2

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *