News4

ہند۔ایران دوستی میں فن خطاطی کا اہم کردار : عامر علی خاں

حیدرآباد دکن اور ایران کو مشترکہ اسلامی ثقافتی ورثہ کی نمائندگی کا اعزاز
سالار جنگ میوزیم میں قونصل خانہ جمہوری ایران حیدرآباد اور روزنامہ سیاست کی خطاطی نمائش کا افتتاح
حیدرآباد : 12 فبروری ( سیاست نیوز) حیدرآباد دکن اور ایران مشترکہ اسلامی ثقافتی ورثہ کی نمائندگی کرتے ہیں اور جہاں تک ہند ۔ ایران تعلقات و دوستی کا سوال ہے یہ صدیوں پرانے ہیں اور دونوں اقوام کا شمار دنیا کی ذہین و فطین اقوام میں ہوتا ہے اور بات جب فن خطاطی خاص طور پر اسلامی خطاطی کی ہوتی ہے تو بلاجھجھک یہ کہا جاسکتا ہے کہ فن خطاطی کے فروغ میں ہندوستانی اور ایرانی خطاط کا اہم کردار رہا ہے اور آج بھی ہندوستانی اور ایرانی خطاط و خوشنویس اس فن کی خدمت میں مصروف ہیں ۔ اگر ہم خطاطی کو اسلامی ملکوں اور بالخصوص ہند ۔ ایران تعلقات کو جوڑنے اور مضبوط بنانے والی کڑی کہتے ہیں تو یہ درست ہوگا ۔ ان خیالات کا اظہار نیوز ایڈیٹر سیاست و نامزد ایم ایل سی جناب عامر علی خاں نے عزت مآب جناب مہدی شارخی قونصل جنرل ایران متعینہ حیدرآباد کے ساتھ مشترکہ طور پر سالارجنگ میوزیم میں چار روزہ خطاطی و خوشنویسی کی نمائش کا افتتاح کے بعد میڈیا سے خطاب میں کیا ۔ اپنی طرز کی یہ نمائش سالار جنگ میوزیم کے مشرقی بلاک میں 15فبروری تک جاری رہے گی ۔ واضح رہے کہ اس نمائش میں ایران کے مہمان خطاط جناب مہدی ایرانی اور مرجان ملی بطور خاص اپنے فن کی نمائش کررہے ہیں جبکہ حیدرآباد سے غوث ارسلان ، محمد رفع ، سید موسیٰ ، عبدالطیف ، رضی الدین اقبال اور نعیم الدین صابری مرحوم کے فن پارے بھی رکھے گئے ہیں ۔ افتتاح کے موقع پر طلباء و طالبات ، مرد و خواتین اور ریسرچ اسکالرس کی بڑی تعداد نے شرکت کی ۔اس نمائش کا اہتمام اسلامی جمہوریہ ایران کے 45 ویں قومی دن کے موقع پر قونصل خانہ جمہوری ایران حیدرآباد نے روزنامہ سیاست کے اشتراک سے کیا ہے ۔ جناب عامر علی خاں کو قونصل جنرل ایران عزت مآب مہدی شارخی نے ایرانی خطاط کے فن پاروں سے واقف کروایا جبکہ جناب عامر علی خاں نے انہیں سیاست سے ایڈیٹر جناب زاہد علی خان کی سرپرستی میں فن خطاطی کے فروغ کیلئے اقدامات قومی و بین الاقوامی سطح پر نمائشوں کے اہتمام اور اس میں مرحوم منیجنگ ایڈیٹر جناب ظہیر الدین علی خان کی کاوشوں سے واقف کروایا اور بتایا کہ دفتر سیاست میں فن خطاطی کے نمونوں کا خزینہ ہے جس میں خط کوفی ، خط نسغ ، خط تلث، خط رقاع ، خط محقق ، خط مغربی ، خط سوڈانی ، خط دیوانی ، خط صپنی اور خط نستعلق اور فن تذہیب کے نادر و نایاب نمونے شامل ہیں ۔ سکریٹری فیض عام ٹرسٹ جناب افتخار حسین ، ڈاکٹر مخدوم محی الدین ، جناب سید حیدر علی اور جناب رضوان حیدر موجود تھے ۔ جناب افتخار حسین نے سیاست اور ایڈیٹر سیاست جناب زاہد علی خاں کو فن خطاطی کے فروغ میں اہم کردار پر خراج تحسین پیش کیا اور کہا کہ نمائش میں خطاطی کے نادر و نایاب نمونے ہیں ۔ بعض نمونے ایسے ہیں جنہیں دیکھ کر عقل حیران رہ جاتی ہے ۔ انہوں نے جناب ظہیر الدین علی خاں مرحوم کو بہت یاد کیا ۔ جناب عامر علی خاں نے پرندوں اور پھولوں کی شکل میں خطاطی کے نمونوں کے بارے میں بھی کہا کہ یہ فن دلوں کو موہ لینے والا فن ہے ۔ انہوں نے طلباء و طالبات سے کل سے شروع ہونے والے ورکشاپ میں شرکت کی خواہش کی ہے ۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *